’’ ہمیں اپنا الگ چاند چاہیئے ‘‘ ، چینیوں نے ضد پکڑ لی ، مصنوعی چاند بنانے کا اعلان بھی کردیا جو حقیقی چاند سے 8 گنا زیادہ روشن ہوگا

سائنس نے کرہ ارض پر تبدیلیوں کے ساتھ ساتھ انسان کے سوچنے کا طریقہ کار بھی وقت کے ساتھ ساتھ تبدیل کردیا ۔ اسی سائنس کی بدولت اب چین نے مصنوعی چاند بنانے کا اعلان کردیا جس کے بارے میں چند دہائیوں قبل تصور بھی نہیں کیا جا سکتا تھا ۔ ایک نجی نیوز چینل کے مطابق چین نے عالمی معیشت پر اپنی دھاک بٹھانے کے بعد 2020 تک اپنا ‘ مصنوعی چاند ‘ بنانے کی منصوبہ بندی بھی شروع کردی ۔

چینی شہر چینگدو میں شہر بھر کی اسٹریٹ لائٹس کو ایک سیٹلائٹ سے تبدیل کرنے کا انکشاف ہوا ہے ، جو حقیقی چاند کی روشنی کو بڑھائے گا ۔ یہ مصنوعی چاند 10 سے 80 کلومیٹر کے دائرے میں روشنی فراہم کرے گا ۔ چینگدو ایرواسپیس سائنس اینڈ ٹیکنالوجی مائیکروالیکٹرانکس سسٹم ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے چیئرمین وو چَن فینگ مصنوعی چاند کی تیاری کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ یہ چاند ، حقیقی چاند سے 8 گنا زیادہ روشن ہوگا ۔

انہوں نے کہا کہ اس چاند کی روشنی کی جانچ کئی سال پہلے شروع کی گئی تھی جو اب مکمل ہوچکی ہے ۔ چینگدو کے حکام کا کہنا تھا کہ انہیں امید ہے کہ اس منصوبے سے اسٹریٹ لائٹ پر خرچ ہونے والے پیسوں کی بچت ہوگی اور سیاحت کو فروغ ملے گا ۔ انسانوں کے بنائے ہوئے اس چاند کے سولر پینل جیسے وِنگز پر ایسی کوٹنگ ہوگی ، جو سورج کی روشنی کو زمین پر منعکس کرے گی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں