اسموگ سے چُھٹکارا حاصل کرنے کے لیے صوبائی حکومت کا مصنوعی بارش کروانے کا امکان

لاہور (اُردو نیوز) اسموگ سے چُھٹکارا پانے کے لئے صوبائی حکومت نے مصنوعی بارش کا آپشن استعمال کرنے کا امکان ظاہر کر دیا ۔ تفصیلات کے مطابق لاہور میں ہونے والی رم جھم اور اس کے باوجود نہ ختم ہونے والی اسموگ کے پیش نظر صوبائی حکومت پر دباؤ ہے کہ اس کے خاتمے کے لیے فوری طور پر کوئی اقدامات کئے جائیں ، اور ان فوری اقدامات میں مصنوعی بارش کا آپشن بھی شامل ہے۔

کمشنر لاہور ڈویژن آصف بلال لودھی کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں مصنوعی بارش کے آپشن پر غور کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے اس پر کام کرنا شروع کر دیا ہے اور اگر شہر میں مزید اسموگ پیدا ہوئی تو اس صورت میں مصنوعی بارش کا آپشن استعمال کیا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ اسموگ کی وجہ سے شہری آبادی بالخصوص لاہور کی آبادی خاصی متاثر ہوئی ہے۔

اس حوالے سے ہمیں فوری اقدامات کرنے کی ضرورت ہے تاکہ شہریوں کی صحت کو خطرے میں نہ ڈالا جائے۔ انہوں نے مزید کہاکہ اس حوالے سے آگاہی پھیلانے میں ٹریفک پولیس، محکمہ ٹرانسپورٹ،ضلعی انتظامیہ ، محکمہ زراعت اور محکمہ انفارمیشن کو اپنا اپنا کردار ادا کرنا چاہئیے۔ واضح رہے کہ لاہور اور گردونواح میں اسموگ نے ڈیرے ڈال رکھے ہیں جہاں شہریوں کو ہر طرف دھندلاہٹ سی نظر آنے لگی جبکہ شہریوں کو آنکھوں میں چبھن اور سانس لینے میں رکاوٹ محسوس ہونے کی شکایات ہیں۔

ماہرین ماحولیات کا کہنا ہے کہ ہوا میں گردوغبار کی آمیزش ڈھائی سو مائکروگرام سے بڑھ گئی ہے جو معمول سے کہیں زیادہ ہے۔ اسموگ کے پیش نظر ہی محکمہ اسکول ایجوکیشن نے دو دن کے لیے تمام اسکول بند رکھنے کا اعلان بھی کیا تھا۔ تاہم گذشتہ رات لاہور، بہاولپور، پشاور، مانسہرہ سمیت کئی شہروں میں کہیں رم جھم اور کہیں تیز بارش ہوئی جس کے باعث اسموگ میں بھی کمی واقع ہو گئی ہے۔