مسلم لیگ ن کے 5 کروڑ میں 3 ویڈیوز خریدنے کا انکشاف

اسلام آباد (اُردو نیوز) احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کی مبینہ ویڈیو سے متعلق بات کرتے ہوئے تجزیہ کار جنرل (ر) امجد شعیب نے کہا کہ ویڈیو کے پیچھے سب پیسے کا کھیل ہے۔انہوں نے دعویٰ کیا کہ ن لیگ نے 5کروڑ میں 3 ویڈیوز خریدی تھیں اور یہ عدالت میں اپنا دفاع نہیں کر پائیں گے۔رضا رومی اور دیگر سینئیر تجزیہ نگاروں نے بھی اس بات سے اتفاق کیا کہ ن لیگ کے لیے عدالت میں اپنا دفاع کرنا مشکل ہو گا۔

ایک اور پروگرام میں جنرل (ر) امجد شعیب کا کہنا تھا کہ ا یک چیز تو اسٹیبلش ہو گئی ہے کہ جج کا ان کے ساتھ آنا جانا تھا ، اور اگر کسی نے اثر انداز ہونا ہے تو وہ فیصلہ آنے سے پہلے اثر انداز ہو گا۔ دوسری بات یہ ہے کہ آخر جج صاحب کی کیا ایسی مجبوری تھی کہ انہوں نے جہاں جہاں کہا جج صاحب جاتے گئے ، ان سے ملتے بھی گئے۔ مجبوری یہ تھی کہ جج صاحب نے ان سے پیسے لیے ہوئے تھے۔

دوسری بات یہ ہے کہ جج صاحب پیسے لینے کے بعد پوری طرح ڈیلیور نہیں کر سکے۔ ان کو کہا گیا تھا کہ آپ دونوں کیسز میں نواز شریف کو بری کر دیں گے جو نہیں ہو سکا۔ کیونکہ جے آئی ٹی کی رپورٹ میں نواز شریف کے خلاف ثبوت و شواہد مضبوط تھے، حالانکہ سزا دونوں کیسز میں ہونی چاہئیے تھی۔ جج صاحب نے ایک کیس میں چھوڑا اور دوسری میں انہوں نے کمزور فیصلہ لکھا جس کے بعد یہ ویڈیو سامنے آئی جس میں انہیں اپنے فیصلے کی صفائی دیتے ہوئے دیکھا گیا۔

اس کے بعد ویڈیو پانچ کروڑ کی ویڈیو لی گئی اور کہا گیا کہ اب تم یہ کہو کہ مجھ پر دباؤ تھا ، مجھ سے فیصلہ کروایا گیا ، میرا ضمیر نہیں مانتا تھا اور پھر تم اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دو ۔ جنرل (ر) امجد شعیب نے کہا کہ جج صاحب سب کچھ کہہ رہے ہیں لیکن انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ انہوں نے پیسے لیے ہیں۔ کچھ عرصہ بعد یہ بات بھی سامنے آ جائے گی۔ اس میں سب سے گھناؤنا کردار جج کا ہے جس نے اس کیس کو برباد کیا۔ اس میں ریاست کا بھی منہ کالا کیا گیا حالانکہ دونوں کیسز میں نواز شریف کو سزا ہونی چاہئیے تھی۔