حکومت کانیامنصوبہ اب پاکستان میں عیدایک ہی دن ہوگی

اسلام آباد(ویب ڈیسک )قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کے اجلاس میں رویت ہلال کمیٹی کی موجودہ قانونی حیثیت پر سوالات اٹھاتے ہوئے کہا گیا ہے کہ عوام رویت ہلال کمیٹی کے فیصلوں پر شرعی اور قانونی طور پر عمل کرنے کے پابند نہیں ہیں۔قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کا اجلاس مولانا اسعد محمود کی صدارت میں پارلیمنٹ لاجز میں ہوا جہاں رویت ہلال کمیٹی کے قیام پر اب تک ہونے والے کام کے حوالے سے مکمل تفصیلات طلب کرلی گئیں اور اگلے اجلاس میں مکمل ایجنڈا رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔

پاکستان پیپلزپارٹی (پی پی پی) کی رکن اسمبلی شگفتہ جمانی کا کہنا تھا کہ ملک میں کم از کم عید تو ایک دن ہونی چاہیے لیکن تاحال رویت ہلال کمیٹی کے قواعد نہیں بنے، اگر بنے ہیں تو فراہم کیے جائیں۔ان کا کہنا تھا کہ رویت ہلال کمیٹی میں اس وقت جو لگ بیٹھے ہوئے ہیں معلوم نہیں ان کی نگاہ بھی ٹھیک ہے یا نہیں۔مولانا اسعد محمود نے کہا کہ موجودہ رویت ہلال کمیٹی کی ابھی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے اس لیے عوام رویت ہلال کمیٹی کے فیصلوں پر شرعی اور قانونی طور پر عمل کرنے کے پابند نہیں ہیں۔قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کے اجلاس میں رویت ہلال کمیٹی کی موجودہ قانونی حیثیت پر سوالات اٹھاتے ہوئے کہا گیا ہے۔

کہ عوام رویت ہلال کمیٹی کے فیصلوں پر شرعی اور قانونی طور پر عمل کرنے کے پابند نہیں ہیں۔قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کا اجلاس مولانا اسعد محمود کی صدارت میں پارلیمنٹ لاجز میں ہوا جہاں رویت ہلال کمیٹی کے قیام پر اب تک ہونے والے کام کے حوالے سے مکمل تفصیلات طلب کرلی گئیں اور اگلے اجلاس میں مکمل ایجنڈا رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔پاکستان پیپلزپارٹی (پی پی پی) کی رکن اسمبلی شگفتہ جمانی کا کہنا تھا کہ ملک میں کم از کم عید تو ایک دن ہونی چاہیے لیکن تاحال رویت ہلال کمیٹی کے قواعد نہیں بنے، اگر بنے ہیں تو فراہم کیے جائیں۔ان کا کہنا تھا کہ رویت ہلال کمیٹی میں اس وقت جو لگ بیٹھے ہوئے ہیں معلوم نہیں ان کی نگاہ بھی ٹھیک ہے یا نہیں۔مولانا اسعد محمود نے کہا کہ موجودہ رویت ہلال کمیٹی کی ابھی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے اس لیے عوام رویت ہلال کمیٹی کے فیصلوں پر شرعی اور قانونی طور پر عمل کرنے کے پابند نہیں ہیں۔