نواز شریف کے خلاف فیصلہ کیا آیا ماروی سرمد اپنا ذہنی توازن کھو بیٹھی ، آرمی چیف کے خلاف ایسی ٹویٹ کر دی کہ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

سپریم کورٹ کی جانب سے انتخابی اصلاحات 2017 کیس کا فیصلہ سنا دیا ہے جس کے بعد میڈیا پر ہلچل سی مچ گئی ہے جبکہ سوشل میڈیا ویب سائٹ پر بھی صحافی اپنے تجزیے شیئر کر رہے ہیں ، سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلے کے فوری بعد معروف خاتون صحافی اور سوشل ورکر ماروی سرمد نے بھی انتہائی حیران کن پیغام جاری کر دیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق ماوری سرمد نے مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ’’ ٹویٹر ‘‘ پر پیغام جاری کیا کہ ” اگر نوازشریف کی جانب سے لیے گئے تمام فیصلے کالعدم ہو گئے ہیں تو ان کے آرمی چیف کی تعیناتی کے فیصلے کا کیا بنے گا ؟“ ۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ جو شخص آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 پر پورا نہیں اترتا وہ پارٹی کی صدارت نہیں کر سکتا ، پارٹی سربراہ کا پارلیمنٹ کے امور میں بڑا مرکزی کردار ہو تا ہے ۔ اس فیصلے کے تحت نواز شریف کی جانب سے 28 جولائی 2017 کی نا اہلی کے بعد بطور پارٹی سربراہ تمام اقدامات بھی کالعدم ہو گئے ہیں ۔ واضح رہے کہ ماروی سرمد یہ ٹویٹ کرنے سے قبل شائد سپریم کورٹ کا نا اہلی کیس کا فیصلہ بغور نہیں پڑھ سکیں جس میں سپریم کورٹ نے نواز شریف کے بطور پارٹی سربراہ کئے گئے فیصلوں کو کالعدم قرار دیا ہے جبکہ آرمی چیف تعیناتی کا فیصلہ 27 نومبر 2016 کو اس وقت کے وزیر اعظم محمد نواز شریف کی ایڈوائس پر صدر مملکت ممنون حسین نے لیفٹیننٹ جنرل جاوید قمر باجوہ کو جنرل کے عہدے پر ترقی دے کر چیف آف آرمی سٹاف مقرر کیا تھا ۔