وفاقی وزیر فیصل واوڈا کے انتہائی غیر ذمہ دارانہ بیانات ، وزارت تبدیل کئے جانے کا امکان

سینئیر صحافی ہارون الرشید کا کہنا ہے کہ فیصل واوڈا کی وزارت کی تبدیلی کا امکان ہے۔ تفصیلات کے مطابق معروف صحافی ہارون الرشید کا کہنا ہے کہ وفاقی وزیر فیصل واوڈا کی وزارت کی تبدیلی کا امکان ہے۔ انہوں نے کہا کہ فیصل واوڈا انتہائی غیر ذمہ دارانہ بیان دیتے ہیں۔ کبھی کروڑوں نوکریوں کا اعلان کر دیتے ہیں تو کبھی گن لے کر چینی سفارتخانے پہنچ جاتے ہیں ۔

ہارون الرشید نے کہا کہ اگر فیصل واوڈا سے متعلق پاکستان تحریک انصاف کے اندر ہی ایک سروے کرایا جائے اور پی ٹی آئی رہنماؤں سے کہا جائے ایک خالی پرچی پر لکھ کر دیں کہ فیصل واوڈا کے پاس وزارت ہونی چاہیے یا نہیں تو آپ نتائج دیکھ کر حیران رہ جائیں گے۔ہارون الرشید نے کہا کہ میں نے فیصل واوڈا کو کبھی اپنی وزارت سے متعلق بات کرتے ہوئے نہیں دیکھا۔

فیصل واوڈا بچوں جیسی حرکتیں ہیں ان کے خلاف اور بھی کئی شکایات ہیں۔ دوبئی اور ملائشیا میں ان کی جائیداد کی شکایت ہیں۔ امریکا کی دوہری شہریت کا بھی مسئلہ ہے۔ ٹیکس کے بھی کئی معاملات ہیں۔ الیکشن کمیشن اور عدالتوں میں بھی معاملات ہیں۔ جب کہ دوسری جانب سینئیر صحافی حامد میر نے کہا ہے کہ فیصل واوڈا سے بار بار معافی مانگنے کے لیے جو اصرار کیا جا رہا تھا اس کا پسِ منظر تھا۔

میرے پاس اطلاعات تھیں کہ کچھ اہم شخصیات نے وزیراعظم سے رابطہ کرکے کہا کہ آپ فیصل واوڈا سے کہیں کہ وہ معافی مانگ لیں۔ میں سمجھ رہا تھا کہ وزیراعظم سے فیصل واوڈ کی بات ہو گئی ہے تو شاید وہ معافی مانگ لیں۔ ہم جانتے ہیں کہ کاشف عباسی سمیت 6 اینکر ٹارگٹ پر دو ہفتے کی پابندی لگا کر معمولی سی کارروائی کی ہے۔ فیصل واوڈا پر دو ہفتے کی پابندی دراصل ان کے لیے ریلیف ہے۔ فیصل واوڈا فوری طور پر ٹاک شوز میں جاتے تو اپوزیشن ارکان انہیں آڑے ہاتھوں لیتے۔