50 ہزار روپے کی خریداری پر شناختی کارڈ کی شرط، اطلاق کب سے ہو گا؟ اہم اعلان کر دیا گیا

اسلام آباد (اُردو نیوز) 50 ہزار روپے کی خریداری پر شناختی کارڈ کی شرط یکم اگست سے نافذ العمل ہو گی۔ تفصیلات کے مطابق ایف بی آر کی جانب سے 50 ہزار روپے مالیت سے زائد کا سامان خریدنے پر شناختی کارڈ کی شرط یکم اگست سے لاگو کردی جائے گی۔ فیڈرل بورڈ آف ریونیو کی جانب سے کہا گیا کہ یکم اگست سے دکانداروں پر لازم ہوگا کہ وہ 50 ہزارروپے یا اس سے زائد کی خریداری کرنے والے صارفین سے شناختی کارڈ طلب کریں۔

خواتین کے لیے یہ رعایت ہوگی کہ وہ اپنے شوہر یا والد کا شناختی کارڈ دکھا سکیں گی۔ دوسری جانب ایف بی آر کی جانب سے درج ریٹیل پرائس سے کم پر سگریٹ فروخت کرنے کو بھی جرم قرار دے دیا گیا ہے ۔ غیر تیار شدہ تمباکو پر ایف ای ڈی 300 روپے سے کم کرکے 10 روپے کردی گئی ۔ بھٹہ خشت پر ساڑھے 7 سے ساڑھے 12 ہزار روپے تک کا فکس ٹیکس بھی یکم اگست سے لاگو ہو جائے گا۔

فنانس ایکٹ 2019ء کے تحت ٹیکس قوانین میں ترامیم کو نوٹیفکیشن جاری کردیاگیا، درآمدی اورمقامی گاڑیوں پرایکسائزڈیوٹی کے نئے سلیب بھی جاری کردیئے گئے ،ایف بی آرکے مطابق 1000سی سی کی درآمدی گاڑی پر2.5 فیصد ایکسائزڈیوٹی عائد کردی گئی،1001سے 1799سی سی کی درآمدی گاڑی پر 5 فیصد ڈیوٹی لاگو ہوگی۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ایف بی آر نے فنانس بل 2019ء کے تحت سیلز ٹیکس ایکٹ میں ترامیم کی وضاحت کر دی۔

نوٹیفکیشن کے مطابق ایف بی آر نے تمام سیلز ٹیکس جنرل آرڈر کو واپس لے لیا ۔ سر کلر کے مطابق ایف بی آر نے ماضی کے تمام سیلز ٹیکس جنرل آرڈرز، سیلز ٹیکس کے سپیشل پروسیجر رولز اور سیلز ٹیکس سپیشل پروسیجر ودہولڈنگ رولز کو واپس لے لیا۔ گھریلو صنعتوں کی تعریف تبدیل اب ایسی صنعتیں جو رہائشی علاقے میں قائم ورکرز کی تعداد 10 سے کم اور سالانہ ٹرن اوور 30 لاکھ روپے تک ہو ۔

جن صنعتوں کے پاس بجلی اور گیس کا کمرشل میٹر ہو گا وہ گھریلو صنعتوں کی تعریف میں نہیں آئیں گی۔ ایک ہزار مربع گز والی دکان اب ٹیئر ون ریٹیلر کی فہرست میں شامل اور دکان کو سٹینڈرڈ ریٹ پر سیلز ٹیکس ادا کرنا ہو گا ۔درآمدی اشیا پر کسٹم ڈیوٹی کے علاوہ مقامی قیمت فروخت پر سیلز ٹیکس ادا کرنا ہو گا۔ یکم اگست سے تمام درآمدی اشیاکی مقامی مارکیٹ میں قیمت فروخت لکھنا ضروری ہوگا ۔