بازار میں دکانداروں سے چوڑیاں پہننا حرام قرار، فتویٰ جاری کردیا گیا

آپ نے اکثر عید کے دنوں میں بازاروں میں خواتین کو دکانداروں سے چوڑیاں چڑھواتے تو دیکھا ہو گا لیکن حال ہی میں دکانداروں کے ہاتھوں سے چوڑیاں پہننے کو حرام قرار دے دیا گیا ہے. میڈیا رپورٹ کے مطابق دارالعلوم دیوبند نے دکانداروں کی مدد سے چوڑیاں پہننے والے خواتین کے خلاف ایک فتویٰ جاری کیا.

ٹائمز آف انڈیا میں شائع رپورٹ میں اس فعل کو گناہ قرار دیا گیا.تمام علمائے کرام نے اس فتوے کی حمایت کی. اسلامک انسٹیٹیوٹ کے رہائشی ایک شخص نے اس مسئلے سے متعلق دریافت کیا کہ کیا یہ درست ہے کہ کوئی خاتون چوڑیاں پہننے کے لیے کسی دکاندار کی مدد طلب کرے تو علمائے کرام نے فتویٰ جاری کرتے ہوئے کہا کہ ایسا کرنا حرام ہے. فتوے کے حامی ایک عالم طارق قاسمی نے کہا کہ شریعت کے مطابق خواتین کو نا محرموں سے بات کرنے کی بھی اجازت نہیں ہے.لہٰذا مرد حضرات اور دکانداروں سے چوڑیاں پہننا غلط ہے. یاد رہے کہ اس سے قبل دارالعلوم دیوبند نے لائف انشورنس پالیسی خریدنے کے خلاف بھی فتویٰ جاری کیا تھا.