خاتون کی ہنی مون پر جانے کے لیے چھٹی کی درخواست سوشل میڈیا پر وائرل، درخواست میں ایسی ایسی باتیں کہ مردوں کے تو کان ہی لال ہو گئے

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) شادی کے بعد نیا نویلا جوڑا سیر کرنے کے لیے جاتا ہے ھسے ہنی مون کا نام دیا جاتا ہے۔تاہم ہنی مون کے لیئے چھٹیاں لینا ایک مسئلہ بن جاتا ہے۔ایس ہی صورتحاال سے دوچار ایک نوجوان خاتون نے بھی اپنے محکمے میں چھٹیوں کے لیے درخواست دی جو کہ سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی۔یہ درخواست امینہ سواب گل نامی خاتون ٹیچر کی جانب سے دی گئی جو کہ گورنمنٹ گرلز ہائی سکول میں پڑھاتی ہے اور ان کی شادی حال ہی میں ہوئی ہے۔ ہنی مون پر جانے کے لیے خاتون نے اپنے محکمے کو چھٹی کی درخواست بھیجی ۔

انہوں نے ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کو ہنی مون پر جانے کے لیے چھٹیاں حاصل کرنے کے لیے درخواست لکھی جس کے متن سے سب کی توجہ اپنی جانب مبذول کرالی۔خاتون ٹیچر نے اپنی درخواست میں لکھا ہے کہ جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ میری حال ہی میں شادی ہوئی ہے۔ شادی شدہ ہونے کے ناطے آپ اس بات کو بخوبی سمجھتی ہیں کہ نئے نویلے جوڑے کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ اپنے ہنی مون کو یادگار بنائیں تاکہ یہ یادیں ان کی زندگی کاحصہ بن جائیں اور ایسی ہی خواہش ہماری بھی ہے۔

میں نے اپنے شوہر سے وعدہ کر لیا ہے کہ ہم دو ہفوں کے لیے ہنی مون پر جائیں گے جو کہ 14 فروری سے شروع ہو کر 28 فروری تک جاری رہے گا کس دوران ہم اپا زیادہ وقت نتھیا گلی،مری، سوات ویلی اور مالم جبہ مین گزاریں گے۔ہم نے تمام تیار کر لی ہے اس لیے میں آپ کی شکرگزار ہوں کہ آپ مجھے دو ہفتوں کی چھٹی دے دیں تاکہ میں اپنے شوہر سے کیے گئے وعدے کی پاسداری کر سکوں اور اپنے خوابوں کو عمل جامہ پہنا سکوں مجھے امید ہے کہپ آپ کی جانب سے مثبت جواب آئے گا۔خاتون کی دلچسپ درخواست کے بعد ان کی چھٹی کی درخواست منظور کر لی گئی۔